Sunday, October 18, 2015

Pakistan must adopt UNCIP resolution to resolve Gilgit Baltistan Issue

The formation of Constitutional Committee by Govt of Pakistan  to settle Gilgit Baltistan issue is a joke with GB nation. Gilgit Baltistan should be granted an Independent Constitutional Assembly to decide her future in the light of UNCIP Resolutions

Friday, October 9, 2015

Gilgit Baltistan should be handed over to UNO

Decolonization and Demilitarization is must to Referendum for "Sovereignty of Gilgit Baltistan".Former Interior Minister Rehman Malik proposal to referendum in Gilgit Baltistan is welcomed , Gilgit Baltistan should be handed over to the UNO for fair and transparent referendum because the region is a disputed territory .GBUM

Thursday, September 10, 2015

Govt of Pakistan endorsed Nationalist,s stance over Gilgit Baltistan status.

Govt of Pakistan endorsed Nationalist,s stance over Gilgit Baltistan status. It is an accurate time to establish " Azad Gilgit Baltistan Govt" like " Azad Kashmir Govt" in the light of UNCIP resolutions. Manzoor parwana

Monday, August 17, 2015

GBUM condemned the govt on case against Manzoor Parwana

قوم پرست رہنماء منظور پروانہ پر کرگل سکردو روڈ کھولنے کا مطالبہ کرنے پر غداری کا مقدمہ حکومت کی بوکھلاہٹ اور ناکامی کا اعتراف ہے-گلگت بلتستان یونائیٹڈ موؤمنٹ


manzoorقوم پرست رہنماء منظور پروانہ پر کرگل سکردو روڈ کھولنے کا مطالبہ کرنے پر غداری کا مقدمہ حکومت کی بوکھلاہٹ اور ناکامی کا اعتراف ہے ، حکومت اس طرح کے منفی اور اوچھے ہتھکنڈوں سے گلگت بلتستان کے عوام کی حقوق کو دبا کر نہیں رکھ سکتی ، اگر پنجابی واہگاہ سے ، پٹھان خیبر سے ، بلوچی میر جاواہ سے اور کشمیری مظفر آباد سے ہمسایہ ملکوں کے ساتھ تجارت اور لین دین کر سکتے ہیں تو گلگت بلتستان کے عوام اشکومن ، استور اور سکردو سے تجارت کیوں نہیں کر سکتے ،اگر انڈیا سے لین دین اور تجارت پاکستان کی سلامتی کے خلاف ہے تو پاکستان انڈیا سے سفارتی اور تجارتی تعلقات ختم کریں یا پھر گلگت بلتستان کے عوام اور منقسم خاندانوں کو بھی سرحد کے آر پارایک دوسرے سے ملنے کا موقع دیا جائے۔ ان خیالات کا اظہار گلگت بلتستان یونائیٹڈ موؤمنٹ کے سپریم کونسل کے ممبران نے ایک ہنگامی اجلاس میں کیا ۔
گلگت بلتستان یونائیٹڈ موؤمنٹ کی سپریم کونسل کے ممبران نے پارٹی کے چئیرمین منظور پروانہ پر بے بنیاد اور ایزا رساں مقدمے کو عوام کسش اور آواز حق کو طاقت کے ذریعے دبائے رکھنے کا ایک حربہ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ وفاقی حکومت گلگت بلتستان میں انسانی حقوق کی مبینہ خلاف ورزیوں کا نوٹس لے اور سیاسی کارکنوں کو انتقامی نشانہ بنانے اور جھوٹے مقدمات کے ذریعے حراساں کرنے کا سلسلہ روکنے کے لئے عملی اقدامات کرے۔ منظور پروانہ پر سابق وزیر اعلیٰ سید مہدی شاہ کے حکم پر بنایا ہوا اس جھوٹے مقدمے کو فوری طور پر واپس لے تاکہ حکومت کی دنیا میں جگ ہنسائی نہ ہو۔
انہوں نے کہا کہ گلگت بلتستان میں سول انتظامیہ کی غیر ضروری اقدامات اور آئے دن یہاں کے مقامی لوگوں پر غداری کے مقدمات نے گلگت بلتستان کے عوام میں بے چینی لی لہر دوڑ رہی ہے ، گلگت بلتستان کے درجنوں قومی رہنماء جیلوں میں بند ہیں ، سینکڑوں سیاسی کارکنوں کے خلاف مقدمات درج ہو چکے ہیں ۔ اور سینکڑوں لو گ غداری کے مقدمات سے باعزت بری ہو چکی ہیں ، عدالتوں کا وقت ضائع کر نے اور سیاسی کارکنوں کو معاشی طور پر کمزور کرنے اور حراسان کرنے کے لئے گلگت بلتستان انتظامیہ کا یہاں کے عوام پر جھوٹے مقدمات بنانے کا سلسلے کو نہیں روکا گیا تو گلگت بلتستان کا ہر باسی سزا یافتہ ہونگے اور گلگت بلتستان کے تمام ملازمتیں غیر مقامیوں کے پاس ہونگے۔ وزیر اعلٰی گلگت بلتستان حفیظ الرحمان انتظامیہ کی اس رویے پر اپنا پالیسی بیان دے اور اس انسانی مسئلے کو اپنے سو دنوں کی
تر جیحات میں شامل کریں۔

GILGIT BALTISTAN: NATIONALIST LEADER CHARGEDIN SEDITION CASE FOR DEMANDING BASIC RIGHTS

GILGIT BALTISTAN: NATIONALIST LEADER chargedin sedition case FOR DEMANDING BASIC RIGHTS
GILGIT: A local court indicted the nationalist leader and chairman of Gilgit Balitstan United movement, Manzoor Hussain Parwana for activities and conspiracy. He was indicted due to his protest against the injustice ad against the powerless government in GB. He is accused according section 123a, 124a, 153a. He appeared in the court on 10th August 2015 along with his lawyer Ahsan Ali Adovcate and Jahangir Shah.
Mr. Parwana was indicted in the FIR Number 211/11.
He is accused for his demand to open the Kargil-Skardu ancient trade route and for his help to meet the divided family across the LoC. He demands that the people of the region have the right to rule and govern the area according to the United National resolution on Kashmir.
He claims that Gilgit Baltistan is a disputed territory and not the constitutional part of Pakistan, therefore the question of treachery or trustiness is before time.
He said the use of state power against helpless people is a kind or suppression and the violation of basic human rights.
Mr. Parwana claims that the Pakistan Government threatened him to kill him and he is indicted in fabricated cases just to stop him for his struggle for the basic rights of the people of Gilgit and Balitistan.
He said if his demand to open the Kargil – Sakardu road is illegal, a treachery and the violation of the law, then the members of the Gilgit Baltistan Assembly should also be indicted as they also demanded the opening of Kargil – Sakardu Road and passed a resolution on the floor of the house.
Reference:

Friday, August 14, 2015

Kargil refugees condemned the case against Manzoor Parwana


Gilgit Baltistan: Charge sheet framed against Nationalist leader Manzoor Parwana


Nationalist leader charged in sedition case in Gilgit Baltistan

موؤمنٹ کے چئیرمین منظور پروانہ پر فرد جرم عائد کر دی

PAREANAپریس ریلیز( گلگت)گلگت کے مقامی عدالت نے قوم پرست رہنما اور گلگت بلتستان یونائیٹڈ موؤمنٹ کے چئیرمین منظور پروانہ پر فرد جرم عائد کر دیا ہے، منظور پروانہ کے خلاف موجودہ نظام کو ظالمانہ نظام قرار دینے اور سکردو کرگل روڈ کھول کر مہاجرین اور منقسم کاخاندانوں کو ملانے کا مطالبہ کرنے پر تعزیرات پاکستان کے دفعات 153a,124 a, 123a کے تحت پانچ سال پہلے مقدمہ درج کیاتھا اور انہیں گرفتار کر کے گلگت سینٹرل جیل منتقل کردیا تھا۔parwana
قوم پرست رہنما ء منظور پروانہ10 اگست 2015ء کو اپنے وکیل معروف قانون دان احسان علی ایڈووکیٹ اور جہانگیر شاہ کے ساتھ گلگت کی مقامی عدالت کے سامنے پیش ہوئے ، جہاں منظورپروانہ پر باقاعدہ طور پر ایف آئی آر نمبر211/11کی روشنی میں فرد جرم عائد کر دیا گیا۔ فرد جرم میں کہا گیا ہے کہ منظور پروانہ نے حکومت پاکستان کو گلگت بلتستان کے انتظامی معاملات یہاں کے عوام کے سپرد کر کے چلے جانے کو کہا ہے اور کرگل سکردو روڈ کھولنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کرگل و لداخ کے مہاجرین اور منقسم خاندانوں کی حمایت کا اعلان کیا ہے۔
منظور پروانہ نے اپنے خلاف الزامات کو بے بنیاد قرار دیتے ہوئے عدالت سے انصاف کی توقع کا اظہار کیا ہے، انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ کی قرار دادوں میں حکومت پاکستان نے اس بات کو قبول کیا ہوا ہے کہ وہ انتظامی معاملات گلگت بلتستان کے عوام کے سپرد کرکے گلگت بلتستان سے چلے جائیں گے ۔ میرے مطالبات گلگت بلتستان کے بیس لاکھ عوامی کی آواز ہے ، کرگل سکردو روڈ کھولنے کا مطالبہ اور موجودہ کرپٹ ، ظالمانہ اور غلامانہ نظام کے خلاف اپنی جد و جہد کو جاری و ساری رکھا جائے گا۔ گلگت بلتستان ایک متنازعہ خطہ ہے اور آئینی طور پر پاکستان کا حصہ نہیں لہذا پاکستان سے غداری اور وفاداری کا سوال قبل از وقت ہے۔ غداری کا مقدمہ بنا کر حراساں کرنا طاقت کے زور پر کسی کو وفادار بنانے کے مترادف ہے ، ڈنڈے اور تشدد سے کسی کو وفادار نہیں بنایا جا سکتا ،میرے خلاف مقدمہ سیاسی نوعیت کا ہے ، ایسے جھوٹے اور من گھڑٹ مقدمات سے ڈرنے والے نہیں ، حکومت مجھے حراساں کرنے، قتل کی دھمکیاں دینے اور جعلی مقدمات میں الجھائے رکھنے کی بجائے گلگت بلتستان میں قائم نو آبادیاتی نظام کو ختم کرنے کے لئے عملی اقدامات کریں۔ اگر کرگل سکردو روڈ کھولنے کا مطالبہ غداری ہے تو گلگت بلتستان اسمبلی کے اراکین کو بھی عدالت کے کہٹرے میں لایا جائے کیونکہ گلگت بلتستان اسمبلی نے بھی سکردو کرگل روڈ کھولنے کی بابت قرارداد پاس کی ہے۔

Wednesday, August 5, 2015

GILGIT BALTISTAN MUST INVOLVED IN CHINA PAKISTAN ECONOMIC CORRIDOR PROJECT AS THIRD PARTY SAYS MANZOOR PARWANA

GILGIT BALTISTAN MUST INVOLVED IN CHINA PAKISTAN ECONOMIC CORRIDOR PROJECT AS THIRD PARTY SAYS MANZOOR PARWANA

Khunjerav pass, Pak China border
Gilgit Baltistan must involved in China Pakistan Economic Corridor project as third party says Manzoor Parwana
WEB DESK |  SOST TODAY

SKARDU (PRESS RELEASE) -Gilgit Baltistan should be involved in China Pakistan Economic Corridor project directly as third party, the people of Gilgit Baltistan must kept informed about the purpose, terms and conditions of the project. Gilgit Baltistanis a disputed region and the case is in United Nations since six decades with the Kashmir issue. The neighboring countries can’t use a disputed territory for socio and commercial interest; this is violation for international law. Before the deceleration of the political status Gilgit Baltistan how other countries do such activities here. The people of Gilgit Baltistan are being exploited socially and geographically.
These thoughts were expressed by the chairman Gilgit Baltistan United Movement, Manzoor Parwana in press release issued on Aug 01.
He said the economic corridor project is being built from Gilgit Baltistan, instead of that the people are not taken in confidence nor involved in the project. The land of Gilgit Baltistan is used for China Pakistan Economic Corridor project. Whereas the people of GB are mislay from the benefits of CPEC. Pakistan, China and Gilgit Baltistan should be given equal representative in the project.
Manzoor Parwana anticipated to include a dry port in Chilas and Skardu in the project and to grant 40 percent of the revenue directly to Gilgit Baltistan Government. Ashkoman to Tajikistan and Kargil to Skardu roads must open immediately. He further demanded to give Gilgit Baltistan tax free zone status, open Gilgit air port for international flights and to take steps to promote tourism in the region.

Sunday, August 2, 2015

Gilgit Baltistan reservations on China Pakistan Economic Corridor

China Pakistan Economic Corridor " the Dreat Game " ....
China and Pakistan should take Gilgit Baltistan on board as a 3rd Party . Manzoor Parwana demanded

Wednesday, July 29, 2015

UN should be convince International Donors to help Flood Affected Population in Gilgit Baltistan


imageاقوام متحدہ بین الاقوامی امدادی اداروں کو ہنگامی بنیادوں پر گلگت بلتستان میں فلڈ ریلیف کے لئے آمادہ کریں.منظور پروانہ

گلگت بلتستان کے عوام قدرتی آفات کے سامنے بے بس اور حکومتی ادارے بے حس ہو چکے ہیں ۔ حکومت کی ناقص منصوبہ بندی ، غیت معیاری فن تعمیر اور عدم دلچسپی کے باعث معمولی قدرتی آفات اور بارشوں کی وجہ سے گلگت بلتستان کے عوام کی زندگی اجیرن بن گئی ہے ، گلگت بلتستان کا دنیا سے رابطہ منقطع ہو چکی ہے ، خطے میں کھانے ہینے کی اشیاء کی دستیابی میں کمی آئی ہے ، بجلی غائب ہو چکی ہے، پیٹرول اور ڈیزل کا بحران پیدا ہو گیا ہے ، رابطہ پلوں کے منہدم ہونے کی وجہ سے درجنوں بالائی علاقوں کا نشیبی علاقوں سے آمد و رفت ختم ہو چکی ہیں ۔ لہذا بین الاقامی امدادی فلاحی ادارے گلگت بلتستان کے سیلاب زدہ عوام کی آبادکاری اور امداد کے لئے آگے آئیں اور براہ راست امدادی سرگرمیوں کے ذریعے عوام کے دکھوں کا مداوا کریں ، ان خیالات کا اظہار گلگت بلتستان کے قوم پرست رہنماء منظور پروانہ نے سیلاب زدہ گان سے اظہار یکجہتی کرتے ہوئے کیا ،
انہوں نے کہا کہ گلگت بلتستان کی سول انتظامیہ کے آفیسران فوٹو سیشن میں مصروف ہیں جبکہ وفاقی حکومت کے سربراہ میاں نواز شریف فضائی دورے کے نام پر تفریح میں لگا ہوا ہے ، اخباری بیانات اور فضائی نطاروں سے سیلاب زدہ گان کے مسائل حل نہیں ہو سکتے ، سیلاب زدہ گان امداد کے منتظر ہیں جبکہ انتظامیہ زبانی تقاریرکے ذریعے عوام کو طفل تسلیاں دے رہی ہیں ، محکمہ مال کے چھوٹے ملازمین جعلی متاثرین کی فہرستیں مرتب کر کے مال بنانے میں لگا ہوا ہے ، حکومت سیلاب زدہ گان کی جذبات سے کھیلنے کاسلسلہ فوری طور پر بند کرتے ہوئے تمام ضلعوں کے لئے ہنگامی فنڈز کا اجراء کریں اور ہنگامی بنیادوں پر لوگوں کی آمد و رفت اور خوراک کے مسائل کو حل کرے۔
منظور پروانہ نے کہا کہ گلگت بلتستان ایک متنازعہ خطہ ہے ، اس وجہ سے فریقین کی عدم دلچسپی کا شکار ہیں جو کہ عوامی مسائل اور سیلاب زدگان کی امدادی سرگرمیوں پر اثر انداز ہو رہی ہے ، لہذا اقوام متحدہ بین الاقوامی امدادی اداروں کو ہنگامی بنیادوں پر گلگت بلتستان میں فلڈ ریلیف کے لئے آمادہ کریں اور عالمی فلاحی ادارے براہ راست گلگت بلتستان میں امدادی سرگرمیوں کا آغاز کرتے ہوئے متاثرین سیلاب کو راحت کا سامان پہنچائے ۔ گلگت بلتستان کے ہمسایہ ممالک سیلاب زدگان کی آباد کاری کے لئے اپنا کردار ادا کریں۔

Sunday, July 26, 2015

Gilgit Baltistan: Human rights violation concernd



Gilgit Baltistan:Sought International Attention

image

اقوام متحدہ ،ا نسانی حقوق کی عالمی  اور پاکستانی تنظیمیں گلگت بلتستان میں انسانی حقوق کی مبینہ خلاف ورزیوں کا نوٹس لے

اقوام متحدہ ،ا نسانی حقوق کی عالمی اور پاکستانی تنظیمیں گلگت بلتستان میں انسانی حقوق کی مبینہ خلاف ورزیوں کا نوٹس لے اور گلگت بلتستان میں قید درجنوں سیاسی قیدیوں کی رہائی کے لئے اپنا مثبت کردار ادا کرے ، اس وقت پاکستان کے چاروں صوبوں میں کوئی سیاسی قیدی پابند سلاسل نہیں تاہم گلگت بلتستان میں سیاسی قیدیوں سے جیل بھرے پڑے ہیں ، قوم پرست اور ترقی پسند سیاسی رہنماؤں اور کارکنوں پر قائم سیاسی مقدمات پرعالمی انسانی حقوق کی تنظیموں کی خاموشی باعث تشویش ہے ۔ ان خیالات کا اظہار گلگت بلتستان یونائیٹڈ موؤمنٹ کے چئیرمین منظور پروانہ نے کیا۔
انہوں نے کہا کہ ترقی پسند اور قوم پرست رہنماؤں بابا جان ، طاہرعلی طاہر،کرنل(ر) نادر حسن، صفدر علی ، افتخارکربلائی ، وسیم عباس ، افتخار حسین اور ان کے دیگر قیدی ساتھیوں کی طویل اسیری اور ان پر قائم بلا جواز مقدمات گلگت بلتستان کے قومی حقوق کی جدو جہد کرنے والوں کو ریاستی طاقت کے ذریعے دبائے رکھنے کا حربہ ہے ، ایسے پر تشدد اقدامات سے گلگت بلتستان کے قومی ہیروز اور محب وطن رہنماؤں کو مرعوب نہیں کیا جا سکتا۔ گلگت اور گاہکوچ جیل کی سلاخیں حریت پسندوں کی راہ میں رکاوٹ نہیں بن سکتی اور نہ ہی غداری اور دہشت گردی کے مقدمات بنا کرگلگت بلتستان کے حقوق کی جنگ سے یہاں کے فرزندوں کو روکا جا سکتا ہے۔
منظور پروانہ نے کہا کہ جے آٹی ٹی کے نام پر گرفتار کارکنوں اور سیاسی رہنماؤں پر جسمانی و ذہنی تشدد نے گونتاماؤبے کی یاد تازہ کر دی ہے اور تشدد کے ذریعے من پسند بیان دلوانے کی حکمت عملی انسانی حقوق کی پامالی کے زمرے میں آتی ہیں ، حکومت گلگت بلتستان کے قومی رہنماؤں کی فوری رہائی کے احکامات جاری کرے بصورت دیگر گلگت بلتستان کے عوام سخت قسم کے احتجاج کرنے پر مجبور ہونگے جس کی تمام تر ذمہ داری گلگت بلتستان انتظامیہ پر عائد ہوگی۔
یاد رہے کہ اس وقت نواز حکومت کی جانب سے مجلس وحدت مسلمین کے سابق امیدوار مطہر عباس ، سیکریٹری سیاسیات غلام عباس سمیت متعدد رہنماوں کو سیاسی قیدی بنا رکھا ہے جس کی وجہ سے عوام میں نوز حکومت کے خلاف شدید غم و غصہ پا یا جاتا ہے

Tuesday, July 14, 2015

Gilgit Baltistan: GBUM Chairman Denounces Provisional Constitutional Province

July 13, 2015

http://unpo.org/article/18369

Manzoor Parwana, Chairman of the Gilgit-Baltistan United Movement (GBUM), has recently spoken against the Pakistani Government’s will to make Gilgit Baltistan a Provisional Constitutional Province (PCP). According to the leader, this denomination is just a way to hide the fact that the Government has not handed over the local administration to the people living in the area. Gilgit Baltistan remains to this day the only Pakistani area not represented in the National Assembly nor at the Senate and with no assembly of its own to discuss and vote its laws.
Below is a press release published by the Gilgit Baltistan United Movement:

All of the Government of Pakistan's steps and proposals to make Gilgit Baltistan a “Provisional Constitutional Province (PCP)” and bring constitutional packages for the region are unlawful and hold no ground at all, as the region does not fall under Pakistan's constitution of 1973. This was stated by the Chairman of the Gilgit-Baltistan United Movement (GBUM), Manzoor Parwana, while reacting over the proposal of Islamabad to deal with the affairs of Gilgit-Baltistan as Provisional Constitutional Province.
He said the “Provisional Constitutional Province” itself is a vague term and it is a joke regarding the denial of the rights of the people of Gilgit Baltistan. Gilgit Baltistan is a disputed territory, that is the reason the region has remained deprived of self-determination for the last 68 years. Pakistan had taken over the administrative control of the region temporarily under the dubious “Karachi Pact 28th April 1949” and was supposed to hand over the local administration of the area to the people’s “Self Autonomy” in accordance with the resolution of the United Nations Commission on India and Pakistan (UNCIP).
The GBUM chief said the assembly of any country formulates laws to run the affairs of the State and make new provinces within the country in accordance with the wishes of the people. However, Gilgit Baltistan is the only area which neither has representation in the National Assembly of Pakistan and the Senate nor has its own assembly to formulate the laws. So the proposed de-facto Provisional Province will be a cause of insecurity and scarcity for the people of Gilgit Baltistan.
Mr. Parwana said the struggle of the nationalist parties in the region is not based on any frustration, prejudice or hatred but was based on a geographical and ideological foundation. The creation of Pakistan was not aimed at depriving other nations of their rights. Therefore, the Government of Pakistan should take positive steps to reinstate the “Sovereignty of Gilgit Baltistan” in accordance with the UNCIP resolutions and principles of democracy.

Sunday, July 12, 2015

Provisional Province is a joke with the people of Gilgit Baltistan: Manzoor Parwana


The government of Pakistan's all steps and proposals to make Gilgit Baltistan “Provisional Constitutional Province (PCP)” and bring constitutional packages for the region are unlawful and hold no ground at all, as the region does not fall under Pakistan's constitution of 1973.This was stated by Chairman Gilgit-Baltistan United Movement Manzoor Parwana while reacting over the proposal of Islamabad to deal the affairs of Gilgit-Baltistan as Provisional Constitutional Province.
He said the “Provisional Constitutional Province” itself is a vague term and it is a joke with the rights denial people of Gilgit Baltistan. Gilgit Baltistan is a disputed territory  that is the reason the region have remained deprived of self-determination for the last over 68 years. Pakistan had taken over the administrative control of the region temporarily under the dubious “Karachi Pact 28th April 1949” and was supposed to hand over the local administration to the area people “Self Autonomy ” in accordance with the resolution of the United Nations Commission on India and Pakistan (UNCIP).
The GBUM chief said the assembly of any country formulates laws to run the affairs of the state and make new provinces within the country in accordance with the wishes of the people. However, Gilgit Baltistan is the only area which neither has representation in the National Assembly of Pakistan, Senate nor has its own assembly to formulate the laws. So the proposed de-facto Provisional Province will be cause of insecurity and scarcity for the people of Gilgit Baltistan.

Mr. Parwana said the struggle of the nationalist parties in the region not based on any frustration, prejudice, hatred but was based on a geographical and ideological foundation. The creation of Pakistan was not aimed at depriving other nations of their rights. Therefore, the government of Pakistan should take positive steps to reinstate the “Sovereignty of Gilgit Baltistan” in accordance with the UNCIP resolutions and principles of democracy.

Issued by

Manzoor Hussain Parwana
Chairman
Gilgit Baltistan United Movement
Skardu Baltistan

Dated: 12/7/2015
www.skardu.blogspot.com

Thursday, July 9, 2015

GBUM WHITE PAPER ON GILGIT BALTISTAN ELECTION 2015

http://www.gbvotes.pk/urdu/archives/4217

لگت بلتستان یونائیٹڈ موومنٹ نے قانون ساز اسمبلی انتخابات 2015ء کے بارے میں وائٹ پیپر جاری کردیا

منظور حسین پروانہ ، چئیرمین

manzoor parwana
گلگت بلتستان میں صوبائی طرز کی قانون ساز اسمبلی کی 24 سیٹوں کے لئے 8 جون 2015ء کو منعقد ہونے والے عام انتخابات دھاندلی کے مبینہ الزامات اور ریاستی مشینری کے استعمال کے ساتھ اپنی منطقی انجام کو پہنچی ہے۔ جہاں ان انتخابات کے دوران انتخابی عمل کو پر امن اور شفاف بنانے کی حکومتی دعوے کانوں کو تھکا دیتی ہیں وہاں قانون ساز اسمبلی حلقہ 10 میں سیکورٹی اہلکاروں اور ایک مذہبی جماعت کے حامیوں کے درمیان تصادم کی وجہ سے ہلاک ہونے والے نوجوان اکبر شاہ ولد غلام اکبر ساکن سبسر روندو، ضلع سکردو کی ماں کی فریاد پر امن انتخابات کی راگ الاپنے والوں کے لب پر خاموشی کا مہر ثبت کر رہی ہے۔
8 جون کی رات سکیورٹی اہلکاروں کے ہاتھوں جس بے دردی سے قانون ساز اسمبلی حلقہ 10 کے عوام پر تشدد ہوا اس کی کوئی نظیر دنیا میں نہیں ملتی۔ سکیورٹی ادارے کے ایک اہلکار سے تکرار اور دفعہ 144 کے نفاذ کی آڑ میں روندو میں سینکڑو ں افراد کو تشدد کا نشانہ بنا یا گیا۔ سکیورٹی اداروں کی کاروائی کے دوران ایک نوجوان اپنی زندگی سے ہاتھ دھو بیٹھا جنہیں گلگت بلتستان میں انتخابات 2015ء کا اکلوتا شہید کہا جا رہا ہے ۔ اسٹیشن کمانڈر سکردو بریگیڈئیر احسان محمود نے ہلاک ہونے ولے نوجوان کی نماز جنازہ میں خصوصی شرکت کی اور اظہار افسوس کرتے ہوئے اسے ایک حادثہ قرار دیا۔
انتخابی عمل کے دوران ووٹرز کو خوف زدہ اور دہشت زدہ رکھنے کے ساتھ ساتھ پولنگ ایجنٹس کو غیر فعال اور معطل کر کے رکھنے میں فورسس کے کردار کو نظر انداز نہیں کیا جا سکتا تاہم پولنگ بوتھ کے ساتھ مسلح فورسس کی تعیناتی نے بہت سارے ووٹ فول کروانے میں بھی اہم کردار ادا کیا۔ خوف کھانے والے دیہاتیوں کی ایک خاص تعداد نے پولنگ اسٹیشنوں کی طرف رخ کرنے کی زحمت ہی نہیں کی تا ہم تیزو چالاک ووٹروں نے اپنے کیا مردہ لوگوں کے ووٹ بھی کاسٹ کئے۔ مردہ ووٹرز نے چند نمائندوں کی جیت میں زندہ ووٹرز سے بھی نمایاں رہے۔ ووٹنگ کے دوران سب سے زیادہ خیانت ووٹ کا استعمال نہ جاننے والوں کے ساتھ ہوا ، ووٹ کا استعمال کرنے کی ذمہ داری پولنگ آفیسر کو دی گئی تھی تاہم پولنگ آفیسرز نے ٹھپہ ووٹرز کی مرضی کے خلاف اپنی پسندکے امیدوار کے انتخابی نشان پر لگا کر سادہ لوح ووٹرز کو چلتا کر دیا۔
گلگت بلتستان میں لیگل فریم ورک آرڈر 2009ء کے تحت ہونے والے انتخابات میں حسب سابق اسلام آباد کے حکمرانوں نے اپنی من پسند نتائج حاصل کرنے میں خاطر خوا ہ کامیابی حاصل کی ہیں۔ حکمران جماعت پاکستان مسلم لیگ نواز نے بھاری اکثریت سے سیٹیں حاصل کرکے گلگت بلتستان میں نو آبادیاتی نظام حکومت کو دوام بخشوانے میں اپنا لوہا منوایاہے۔ مذہبی اور دیگر سیاسی جماعتوں کو بھی کوٹہ پر ایک آدھ سیٹیں ملی ہیں جو کہ ان جماعتوں کے وجود کو برقرار رکھنے میں مددگار ثابت ہو سکتی ہیں ۔
گلگت بلتستان کی انتخابات میں پاکستان مسلم لیگ کی بھاری برتری کے کئی وجوہات سامنے آئے ہیں جن میں بنیادی وجہ پاکستان مسلم لیگ کی وفاق میں قائم حکومت ہے۔ چونکہ گلگت بلتستان اسلام آباد کے برائے راست کنٹرول میں ہونے کی وجہ سے انتظامی و مالیاتی معاملات میں وفاق کے زیر نگیں ہے اس لئے گلگت بلتستان میں وہی جماعت حکومت بناتی ہے جو اسلام آباد میں حکومت کر رہی ہوتی ہے۔ مسلم لیگ ن کی کامیابی کی دوسری اہم وجہ پاکستان پیپلز پارٹی کی گزشتہ پانچ سالوں کی بد عنوانی اور کرپشن بھی ہے۔ پی پی پی کی لوٹ کھسوٹ اور کرپشن نے عوام کو مسلم لیگ ن کی طرف راغب کیا ہے۔
گلگت بلتستان میں انتخابی دھاندلی ایک خاص تیکنیک کے ذریعے کی گئی ہے کہ دھاندلی کے پے در پے الزامات کے باوجود سیاسی و مذہبی جماعتیں ان انتخابی دھاندلیوں کو ثابت کرنے میں ناکام نظر آرہی ہیں۔ وفاقی وزیر امورکشمیرو گلگت بلتستان برجیس طاہر کی بطور گورنر گلگت بلتستان تعیناتی کے عمل سے ہی گلگت بلتستان میں انتخابی دھاندلی کی بو محسوس کی جارہی تھی تاہم مختلف سیاسی جماعتوں کی اصرار پر فوج کی تعیناتی کے بعد انتخابی دھاندلی کو تحفظ حاصل ہوا اور فوج کے زیر نگرانی انتخابات کا مطالبہ کرنے والی جماعتیں آج چیخ رہی ہیں۔ انتخابی عمل کو بظاہر صاف شفاف بنانے کے لئے گلگت بلتستان میں بڑے پیمانے پر مذہبی و مسلکی جماعتوں یہاں تک کہ کالعدم مذہبی جماعتوں کو بھی انتخابات میں حصہ لینے کی اجازت دی گئی تاکہ مذہبی ووٹوں کو بھی تقسیم کیا جا سکے۔
پاکستان پیپلز پاٹی کا الزام ہے کہ کالعدم مذہبی جماعت تحریک اسلامی پاکستان کو پاکستان پیپلز پارٹی کا ووٹ بینک توڑنے کے لئے حصہ دار بنایا گیا جس کی وجہ سے پاکستان مسلم لیگ ن کے امیدار حفیظ الرحمان گلگت حلقہ سے کامیاب ہو گئے اور وہ وزیر اعلیٰ کے مسند پر فائز ہوئے۔ جہاں تحریک اسلامی پاکستان کو مستفید کرایا گیا وہاں مجلس وحدت مسلمین کو بھی سرکاری مشنری کے ذریعے انتخابی عمل میں معاونت فراہم کی جاتی رہی اور اس وقت بھی گریڈ 16 کاایک سرکاری ملازم مجلس وحدت مسلمین کے سکردو حلقہ روندو سے مرکزی عہدیدار ہیں اور الیکشن کی تمام تر کمپئن میں سرکارکی طرف سے انہیں ہر قسم کی معاونت حاصل رہی اور اب بھی ہے۔ جبکہ قانون کے مطابق کسی سرکاری ملازم کا کسی سیاسی عمل میں دخل ممنوع قرار دیا گیا ہے ۔ تاہم جب محکمہ تعلیم کے اعلیٰ ذمہ داران کی توجہ اس سیاست دان استاد کی جانب مبذول کرایا جاتا ہے تو جواب ملتا ہے کہ ہم بے بس ہیں کیونکہ اس کو سرکاری آشیر باد حاصل ہے۔ اس طرح کے کئی اور دیگر سرکاری ملازمین کی ایم ڈبلیو ایم میں سیاسی عہدوں پر فائز ہونا اس بات کو تقویت دے رہی ہے کہ ایم ڈبلیو ایم کے پیچھے سرکاری ایجنسیوں کا ہاتھ ہے۔
انتخابات میں بڑی تعداد میں جعلی پوسٹل بیلٹ استعمال کر کے مسلم لیگ ن کے ہارنے والے امیدواروں کو جیتایا گیا اس کی مثال سکردو حلقہ 1 ہے جہاں پاکستان تحریک انصاف کے امید وار ایک ووٹ سے جیتا تھا بعد میں دو پوسٹل بیلٹ ووٹ آگئے اور پاکستان مسلم لیگ کے امید وار کو برتری حاصل ہوگئی ، یوں پوسٹل بیلٹ سے جیت ہار میں بدل گیا اور ہار جیت میں۔ پاکستان تحریک انصاف نے الزام لگایا ہے کہ ان کے امیدوار کو جعلی پوسٹل بیلٹ سے ہرایا گیا ہے۔
ضلع دیامر کے حلقہ داریل میں مبینہ دھاندلی کو روکنے کے لئے احتجاج کرنے والوں اوراسیکورٹی اہلکاروں کے درمیان تصادم ہوا جس میں دو سکیورٹی اہلکار زخمی ہو گئے۔ تصادم کے بعد5 ووٹرز کو انسداد دہشت گردی کے مقدمے میں گرفتار کیا گیا ہے اور کئی ملزموں کے گھر مسمار کر دئیے گئے ہیں۔ مشتعل افراد نے بیلٹ باکس کو آگ لگا دی جس کی وجہ سے ابھی تک انتخابی نتائج روک کر رکھا ہوا ہے۔ چیلاس میں انتخابات کے دوران سکیورٹی اداروں کے ساتھ تصادم کے بعد درجنوں لوگوں کے گھروں کو آگ لگانے کی اطلاعات بھی موجود ہیں ۔
راقم اور قراقرم نیشنل موومنٹ کے چیئرمین جاوید حسین نے آزاد حیثیت سے الیکشن میں حصہ لیا تاہم ہماری بطور آزاد امید وار انتخابات میں شمولیت کو بھی سرکار کی طرف سے نا پسندیدہ قرار دیا گیا ۔ ہمارے خلاف ہر طرح کا پرو پیگنڈہ کیا گیا ۔ ہمیں انتخابی ریلی کی اجازت نہیں دی گئی اور ملک دشمن ، غدار اور غیر ملکی ایجنٹ قرار دے کر سادہ لوح عوام کو ہماری حمایت سے باز رکھا گیا۔ ہمارے انتخابی جھنڈوں کو لوگوں کے گھروں سے یہ کہہ کر اتروایا گیا کہ یہ اقوام متحدہ کا جھنڈا ہے اور بعض دیہاتوں میں کہا گیا کہ یہ انڈیا کا جھنڈا ہے اسے مت لگاو ورنہ جیل جاو گے۔ ہمارے حامیوں کو ہمیں ووٹ دینے کی صورت میں کڑی سزائیں دینے اور ملازمتوں سے نکالنے کی دھمکیاں بھی دی گئی۔
انتخابات میں اس بار مذہبی کارڈ کا استعمال بڑے پیمانے پر ہوا۔ مذہبی کارڈ تمام سیاسی و مذہبی جماعتوں نے استعمال کئے۔ تحریک اسلامی ، ایم ڈبلیو ایم اور جمعیت علماء اسلام نے مذہبی بنیاد پر ووٹ حاصل کئے۔ تحریک اسلامی اور ایم ڈبلیو ایم کو پڑنے والے تمام ووٹ مذہبی عقیدت کی بنیاد پر تھی۔ ووٹوں کی خرید و فروخت پر پابندی کے باوجود انتخابات میں جیتنے کے لئے امیداروں نے کروڑوں روپے خرچ کئے، انفرادی ووٹ خریدنے کے عمل کے ساتھ ساتھ ووٹرز کو اجتماعی طور پر بھی خریدا گیا لیکن الیکشن کمیشن نے صورت حال سے با خبر ہونے کے باوجود کوئی ایکشن نہیں لیا، جس کی وجہ سے با اثر لوگ جیت گئے اور سیاسی کارکنوں کو شکست ہوئی ۔
گلگت بلتستان کے انتخابات کا قوم پرست تنظیموں نے بائیکاٹ کر رکھا تھا۔ الیکشن سے چند دن قبل حکومت نے دھاندلی زدہ انتخابات کے خلاف گلگت میں اقوام متحدہ کے ذیلی دفتر میں یاد داشت پیش کرنے کے لئے جانے والے قوم پرست قائدین کو گرفتار کر کے ان پر دہشت گردی کے مقدمات بنا کر انہیں جیل بھیج دئیے۔ ان سرکردہ قوم پرست رہنماوں میں بانی گلگت بلتستان کے فرزند کرنل(ر) نادر حسن ، بالاورستان نیشنل فرنٹ کے صدر صفدر علی ، معروف قوم پرست رہنماء افتخار حسین، وسیم عباس اور ان کے دیگر ساتھی شامل ہیں جو ان دنوں گلگت جیل میں اسیری کی زندگی گزار رہے ہیں۔ قوم پرستوں کے خلاف بغاوت اور دہشت گردی کا مقدمہ در اصل حکومت کی انتخابی دھاندلیوں کو منظر عام پر آنے سے روکنا تھا لیکن فافین سمیت انتخابی عمل پر نظر رکھنے والی قومی اور عالمی اداروں نے گلگت بلتستان کے انتخابات کو غیر شفاف، غیر آئینی اور جانبدارانہ قرار دئیے ہیں ۔

گلگت بلتستان میں انتخابات کا ڈرامہ نو آبادیاتی نظام کو تازہ آکسیجن فراہم کر کے چہروں کی تبدیلی کے ذریعے عالمی رائے عامہ کو یہ تاثر دینے کی کوشش کا حصہ ہے کہ گلگت بلتستان کے لوگوں کو حق رائے دہی حاصل ہیں۔ حق رائے دہی کی اس جعلی عمل کو بھی انتخابی دھاندلی کے ذریعے مشکوک بنانے اور اپنی پسند کی کٹھ پتلی حکومت بنانے کے باوجود بھی گلگت بلتستان کا قومی سوال کا کوئی جواب دینے میں اسلام آباد کی سرکار ناکام نظر آرہی ہے۔ عوام پوچھتے ہیں کہ کیا ان انتخابات کے بعد گلگت بلتستان کی متنازعہ حیثیت ختم ہو گئی ؟ کیا ان انتخابات کے بعد گلگت بلتستان کے لوگوں کو پاکستان کی قومی اسمبلی اور سینیٹ میں نمائندگی مل گئی؟ کیا ان انتخابات کے بعد گلگت بلتستان تنازعہ کشمیر کا حصہ نہیں رہا؟ کیا ان انتخابات کے بعد گلگت بلتستان کے عوام کو آئینی و بنیادی حقوق مل گئی؟ کیا ان انتخابات سے گلگت بلتستان کو خود مختاری و آزادی نصیب ہوئی ؟ کیا ان انتخابات کے بعد گلگت بلتستان پاکستان کا آئینی صوبہ بن گیا؟کیا ان انتخابات کے بعد گلگت بلتستان کی قومی تشخص بحال ہو گئی اور کیا ان انتخابات کے بعد گلگت بلتستان میں انسانی حقوق کی مبینہ خلاف ورزیوں ، کرپشن ، اقرباء پروری اور لوٹ کھسوٹ میں کوئی کمی آئے گی۔ یہ وہ چندسوالات ہیں جن کی بنیاد پر گلگت بلتستان سے قومی ہمدردی رکھنے والے اور یہاں کے عوام کے دکھ درد کو سمجھنے والے ان انتخابات کو غلامی کی ساعتوں کو طول دینے کا حکومتی حربہ سمجھتے ہیں

Friday, July 3, 2015

Gilgit Baltistan: Anti Bonji Dam Drive in Baltistan

 Anti Bonji Dam Drive in Baltistan
Rondu Dam Action Committee organized a protest rally against the proposed 7,100 MW Bunji Hydroelectric Project being built in the Rondu Valley of Gilgit-Baltistan. 
Hundreds of people came out on the streets in Rondu to demand renaming of the proposed Bonji Dam. The protesters said that the dam is being constructed in Rondu but it is being called Bonji dam, which is unjust and likely to deprive the residents of Rondu, Baltistan.
 Chairman Dam Action Committee Muhammad Ibrahim spoke during the protest demonstration that around 47 kilometers area of Rondu Valley will be caused to submerge the dam. He threatened to oppose construction of the dam if demands of Ronduvians were not met.




Manzoor Parwana Chairman GBUM added that “the people of Rondu would not even allow govt to build a small lake in the area let alone a mega dam”. With the construction of the Bunji dam, the historic town of Shingus, Chhamachu,Yulbo and Subsar would be severely damaged including partial flooding of the area and the loss of traditional lands rich in minerals and precious stones. Local residents would also be deprived of grazing grounds .He said that around 30,000 people from Rondu will be displaced after construction of the dam.



Saturday, June 27, 2015

Nationalist leaders are being implicated in fake and terrorism cases in Gilgit-Baltistan

Nationalist leaders are being implicated in fake and terrorism cases in Gilgit-Baltistan 

For the last about three decades, hundreds of political leaders and rights defenders have faced state brutalities besides fabricated cases in the disputed territory of Gilgit-Baltistan. Ironically, with the passage of time there seems no improvement in the situation and the rights abuses go on unabated in the region. There are a number of political activists who are still behind bars simply for raising voice for the rights of the two million people of Gilgit-Baltistan. Besides, scores others are entangled in the never-ending and nerve-breaking process of facing court cases. Syed Haider Shah Rizvi, one of the most prominent nationalist leaders from Skardu, passed away while defending himself in one such concocted case.

Manzoor Parwana, the chief of the Gilgit-Baltistan United Movement, was booked in a treason case on July 28, 2011, and after the passage of about four years this case is still progressing at a snail's pace and is its initial stage. The state is deliberately trying to delay the case even though Manzoor Parwana has been very regular to pursue the matter and attends each and every hearing regularly. Mr Parwana is charged with putting the security of the country at a stake by demanding the reopening of the old Skardu-Kargil road. Progressive youth leader Baba Jan has been awarded life imprisonment after being booked under the anti-terrorism act for raising voice and leading rallies for the rights of the people displaced by the Attabad lake. He is at the moment languishing in the district jail of Kahguch in Ghizer. A leader of the Ghizer Youth Congress, Tahir Ali, has also been booked in another treason case for struggling to ensure the basic rights of the people of Gilgit-Baltistan. Another treason case is under adjudication in the chief court of Gilgit-Baltistan against Karakorum National Movement chief Javed Hussain and his colleagues. They are charged with presenting a memorandum to the UN observers in the Gilgit city about the issues facing the people of Gilgit-Baltistan. Very recently, scores of political activists and nationalist leaders including Col retired Nadir Khan, Safdar Ali, Iftikhar Hussain, Waseem and others were rounded up by the police and put in jail for trying to hand over a memorandum to the UN observers in the city regarding the public reservations over the China Pakistan Economic Corridor. They have been languishing in the jail where it is also alleged that the police tortured them. It is very disturbing to note that all these political activists and rights defenders were booked under the anti-terrorism act and treated as terror suspects for raising voce for the rights of the people of the region.

Friday, June 26, 2015

Gilgit Baltistan: Fake cases aimed to subdue nation

Fake cases aimed to subdue nation: Manzoor Parwana 

SKARDU: The use of state force and registration of fabricated cases under the anti-terrorism law to silence the voice of the people of Gilgit-Baltistan is a conspiracy to suppress the right of self-determination of the two million people of the region. 


This was stated by Manzoor Hussain Parwana, the chairman of the Gilgit-Baltistan United Movement (GBUM) at the occasion of International Day of Anti -VIOLATION . He said anyone associated with the national movement was a national hero and ill treatment of and torture on such national heroes was intolerable for the people of the region. He said that the registration of terrorism cases against Col Nadir Khan, Safdar Ali, Iftikhar Hussain, Wasim and others was an insult with the two million people of Gilgit-Baltistan. He said every citizen going towards the office of the UN observers in the city was being framed in fake cases under the terrorism act. He said it was also a matter of great concern that the UN observers were not taking any notice of the widespread rights violations in Gilgit-Baltistan. The purpose of the observers' office was to keep the UN informed about the situation in the disputed region and if going towards the office was a crime, the facility should be closed. The GBUM chief also said that rights defenders and nationalists such as Baba Jan, Safdar Ali and Col Nadir should be released and the cases against them should be withdrawn.

Sunday, June 21, 2015

Gilgit Baltistan: The Saga of Sedition Charges against the leaders

اسلام ٹائمز: حال ہی میں بالاورستان نیشنل فرنٹ کے صدر صفدر علی، کرنل (ر) نادر حسن، افتخار حسین، وسیم اور ان کے دیگر تیں ساتھیوں کو گلگت بلتستان کی متنازعہ حیثیت کے تناظر میں پاکستان چین اقتصادی راہداری منصوبے کی بابت اقوم متحدہ مبصر مشن کے طرف یادداشت پیش کرنے کے لئے پیش قدمی کرنے کا الزام لگا کر تشدد کے بعد جیل بھیج دیئے گئے ہیں۔ اس بار قومی حقوق کے لئے جدوجہد کو دہشت گردی قرار دیا گیا ہے اور ان سیاسی رہنماؤں پر دہشت گردی کا مقدمہ قائم کیا گیا ہے۔
رپورٹ: منظور پروانہگلگت بلتستان کے سینکڑوں سیاسی رہنماء اور کارکن گذشتہ تین دہائیوں سے ریاستی جبر و استحصال کا شکار ہیں، گلگت بلتستان کے عوام کے بنیادی و انسانی حقوق کے لئے جدوجہد کرنے والے درجنوں سیاسی رہنماء پابند سلاسل ہیں اور کئی رہنماء گلگت بلتستان کی عدالتوں میں نہ ختم ہونے والی پیشی بھگت رہے ہیں، معروف قوم پرست رہنماء سید حیدر شاہ رضوی پر اسکردو کی ایک عدالت میں غداری کا مقدمہ چل رہا تھا، اب وہ اس دارالفانی سے کوچ کر گئے ہیں، تاہم ان پر قائم مقدمہ ابھی تک زیر سماعت ہے۔ گلگت بلتستان یونائیٹڈ موؤمنٹ کے چیئرمین منظور پروانہ کو 28 جولائی 2011ء غداری کے ایک جھوٹے مقدمے میں گلگت سے گرفتار کیا گیا تھا، یہ مقدمہ چار سال گزرنے کے بعد بھی اپنی ابتدائی مراحل میں ہیں، سرکار اس کیس کی پیروی میں مسلسل چار سالوں سے اجتناب برت رہی ہے، تاہم منظور پروانہ ہر مہینے باقاعدگی کے ساتھ عدالت میں حاضری دے رہا ہے، نہ عدالت عالیہ کی طرف سے کیس خارج کیا جاتا ہے اور نہ ہی سرکار عدالت میں پیش ہو رہی ہے۔ منظور پروانہ پر الزام ہے کہ انہوں نے کرگل اسکردو روڈ کھولنے کا مطالبہ کرکے ملک کی سلامتی کو نقصان پہنچانے کی کوشش کی ہے۔ ترقی پسند رہنماء بابا جان کو عمر قید کی سزا سنائی جا چکی ہے اور ان دنوں وہ گاہکوچ جیل میں قید و بند کی زندگی گزار رہے ہیں۔ بابا جان کا جرم عطا آباد جھیل کے متاثرین کی آباد کاری کے لئے احتجاج کرنا بتایا گیا ہے۔

اسی طرح غذر یوتھ کانگریس کے سرکردہ رہنماء طاہر علی طاہر کے خلاف عوامی حقوق کے لئے آواز بلند کرنے کی جرم میں غداری کا مقدمہ چل رہا ہے، جبکہ قراقرم نیشنل موؤمنٹ کے چیئرمین جاوید حسین اور ان کے رفقاء کے خلاف چیف کورٹ گلگت میں بغاوت کا مقدمہ چل رہا ہے، ان رہنماؤں پر گلگت میں اقوام متحدہ مبصر مشن میں گلگت بلتستان کے عوامی مسائل پر مبنی یادداشت پیش کرنے کا الزام ہے۔ حال ہی میں بالاورستان نیشنل فرنٹ کے صدر صفدر علی، کرنل (ر) نادر حسن، افتخار حسین، وسیم اور ان کے دیگر تیں ساتھیوں کو گلگت بلتستان کی متنازعہ حیثیت کے تناظر میں پاکستان چین اقتصادی راہداری منصوبے کی بابت اقوم متحدہ مبصر مشن کے طرف یادداشت پیش کرنے کے لئے پیش قدمی کرنے کا الزام لگا کر تشدد کے بعد جیل بھیج دیئے گئے ہیں۔ اس بار قومی حقوق کے لئے جدوجہد کو دہشت گردی قرار دا گیا ہے اور ان سیاسی رہنماؤں پر دہشت گردی کا مقدمہ قائم کیا گیا ہے۔